شہباز سینئر حلالہ کرواکردوبارہ سیکرٹری بن گئے،کانگریس ممبران کی جانب سے آڈٹ کو غیر آئینی قرار دے دیا گیا، اولمپین خالد بشیر

لاہور:10فروری(پلیئرزڈاٹ پی کے) شہباز سینئر حلالہ کرواکردوبارہ سیکرٹری بن گئے، قومی کھیل کو بطور سیکرٹری کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکے، این آر او کا انتظار کرنے والے احتساب کے لئے تیار رہیں، پرو لیگ میں شرکت نہ کرنے پرپاکستان کو پابندی کا سامنا نہیں، تاثر دینے کی کوشش کی جارہی ہے کہ پاکستان کی پابندی اور معطلی کو ختم کرایا جارہا ہے، کانگریس ممبران کی جانب سے آڈٹ کو غیر آئینی قرار دے دیا گیا، حکومت ہاکی فیڈریشن میں کی گئی بے ضابطگیوں کا نوٹس لے، اولمپین خالد بشیر
عالمی شہرت یافتہ پینلٹی کارنر سپیشلسٹ اور پاکستان ہاکی کے مایہ ناز کھلاڑی اولمپین خالد بشیرنے کہا ہے کہ شہباز سینئر حلالہ کروا کردوبارہ سیکرٹری بن گئے، سابقہ دور میں بطور سیکرٹری قومی کھیل کو کوئی فائدہ نہیں دے سکے. ذاتی خواہشات پر ہاکی کا رہا سہا جنازہ بھی نکل جائے گا. انہوں نے کہا کہ کانگریس ممبران کی جانب سے آڈٹ رپورٹ کو غیر آئینی قرار دیا جاچکا ہے، سابق ادوار میں حاصل کی گئی کروڑوں روپے کی گرانٹس کو کیسے خرچ کیا گیا یہ بات کسی ڈھکی چھپی نہیں. پاکستان ہاکی فیڈریشن کے ارباب اختیارمقدس گائے بنے بیٹھے ہیں، حساب مانگنے پر برا مناتے اور گانگریس ممبران کو نوٹس بھیج رہے ہیں. اظہار رائے پر قدغن لگانا ہاکی فیڈریشن کے آئین میں نہیں. حق بات کو ہاکی فیڈریشن کےارباب اختیار اپنی شان میں گستاخی سمجھتے ہیں.
پاکستان ہاکی کے عالمی شہرت یافتہ پینلٹی کارنر سپیشلسٹ اولمپین خالد بشیر نے کہا کہ کانگریس ممبران ظاہر شاہ اور علی عباس کے موقف کی تائید کرتا ہوں اور حکومت پاکستان ،وفاقی وزارت کھیل برائے بین الصوبائی رابطہ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ہاکی فیڈریشن کے فرانزک آڈٹ کے عمل کو تیز کیا جائے اور اسکی تحقیقات میں سینئر ٹیکنو کریٹ اولمپینز کو بھی شامل کی جائے جو کہ اسکی تحقیقات میں ممدومعاون ثابت ہو سکتے ہیں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں